اے دین کے مجاہد

 

اے دین کے مجاہد تُو کہاں چلا گیا ہے
یہ جہاد کی فضائیں تجھے یاد کر رہی ہیں

اپنوں کے خُوں میں ڈوبی کشمیر کی وہ گلیاں
جلتا ہوا فلسطین، روتا ہوا وہ شیشان
کچھ ہوش کر مسلمان! حرمین کی صدا ہے
یہ جہاد کی فضائیں تجھے یاد کر رہی ہیں

بہنوں کی عصمتوں کی دھجیاں اڑائی جائیں
وہ بیٹیوںکے سر سے چھنتی ہوئی رِدائیں
یہ دیکھ کر بھی غفلت کی نیند سو رہا ہے
یہ جہاد کی فضائیں تجھے یاد کر رہی ہیں

یہ مصطفیٰ ﷺ کی امت کب سے سسک رہی ہے
کیا غیرتِ مسلماں ناپید ہو گئی ہے
ہر سمت خونِ مسلم یہ تجھ سے پوچھتا ہے
یہ جہاد کی فضائیں تجھے یاد کر رہی ہیں

محشر کے روز رب کو تم کیا جواب دوگے
اُن بھائیوں کے خون کا کیسے حساب دو گے
اللہ کے نبی کی، قرآن کی صدا ہے
یہ جہاد کی فضائیں تجھے یاد کر رہی ہیں

اے دین کے مجاہد تُو کہاں چلا گیا ہے
یہ جہاد کی فضائیں تجھے یاد کر رہی ہیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s